Please wait..

غزل نمبر۲

 
حلقہ بستند سر تربت من نوحہ گراں
دلبراں ، زہرہ وشاں ، گلبدناں ، سیم براں

مطلب: میری قبر پر ماتم کرنے والوں نے حلقہ باندھا ، دلبروں ، زہرہ جمالوں ، گلبدنوں ، سیم بروں نے ۔

 
در چمن قافلہ لالہ و گل رخت کشود
از کجا آمد اند ایں ہمہ خونیں جگراں

مطلب: لالہ و گل کے قافلے نے چمن میں ڈیرا ڈالا یہ سب خونیں جگر والے کہاں سے آئے ہیں ۔

 
اے کہ در مدرسہ جوئی ادب و دانش و ذوق
نخرد بادہ کس از کارگہ شیشہ گراں

مطلب: اے کہ تو مدرسے میں ادب اور دانش میں مستی ڈھونڈ رہا ہے ۔ شیشہ گروں کی دکان سے کوئی شراب نہیں خریدتا ۔ اے مخاطب تو مدرسہ میں ادب و دانش و ذوق ان تین خوبیوں کو تلاش کر رہا ہے یہ تیری نادانی ہے ۔ شیشہ گر کی دکان سے جام اور صراحی تو مل سکتی ہے لیکن شراب نہیں ۔

 
خرد افزود مرا درس حکیمان فرنگ
سینہ افروخت مرا صحبت صاحب نظراں 

مطلب: یورپ کے فلسفیوں کی تعلیمات نے اگرچہ میری سمجھ بوجھ بڑھا ئی لیکن نظر والوں کی صحبت نے میرا سینہ روشن کیا ۔

 
برکش آں نغمہ کہ سرمایہ آب و گل تست
اے ز خود رفتہ تہی شو ز نواے دگراں

مطلب: وہ نغمہ پیدا کر جو تیری مٹی کا سرمایہ ہے ۔ اے اپنے آپ سے بے سدھ دوسروں کا راگ الاپنا چھوڑ دے ۔ (دوسروں کی تقلید مت کر اپنی خودی میں ڈوب کر اپنی معرفت حاصل کر ۔ )

 
کس ندانست کہ من نیز بہاے دارم
آں متاعم کہ شود دست زد بے بصراں

مطلب: کسی نے نہ جانا کہ میں بھی کوئی قیمت رکھتا ہوں ۔ افسوس! میری قوم نے مجھے نہیں پہچانا ۔ میں ایسی دولت ہوں جو اندھوں کے ہاتھ لگ جائے ۔