Please wait..

فلک مریخ
(مریخ کے لوگ)

 
چشم را یک لحظہ بستم اندر آب
اندکے از خود گسستم اندر آب

مطلب: میں (زندہ رود) نے کچھ دیر کے لیے پانی میں اپنی آنکھ بند کی اور کچھ دیر کے لیے اپنے آپ سے دور ہو گیا ۔

 
رخت بردم زی جہانے دیگرے
با زمان و با مکانے دیگرے

مطلب: پھر میں اس جہان (فلک زہرہ) سے دوسرے جہان کی طرف اپنا سامانِ سفر لے گیا ۔ اس جہان کا زمان و مکان کچھ اور طرح کا تھا ۔

 
آفتاب ما بآفاقش رسید
روز و شب را نوع دیگر آفرید

مطلب: ہمارا سورج اس (نئے جہان ) کے آفاق تک پہنچا اور وہاں اس نے نئی قسم کے دن رات پیدا کئے (وہاں کے دن رات مختلف تھے) ۔

 
تن ز رسم و راہ جاں بیگانہ ایست
در زمان و از زماں بیگانہ ایست

مطلب: یہاں (فلک مریخ میں ) بدن، روح کے طور طریقوں سے بیگانہ ہے ۔ وہ زمان میں رہتے ہوئے بھی زمان سے بیگانہ ہے (نا آشنا) ہے ۔

 
جان ما سازد بہر سوزے کہ ہست
وقت او خرم بہر روزے کہ ہست

مطلب: ہماری جان ہر طرح کے سوز سے موافقت اختیار کر لیتی ہے ۔ اور جو بھی دن آئے اس کا وقت خوشی میں گزر جاتا ہے ۔

 
می نگردد کہنہ از پرواز روز
روزہا از نور او عالم فروز

مطلب: وہ (ہماری جان) وقت گزرنے سے پرانی نہیں ہو جاتی ، بلکہ دن اس کے نور سے دنیا کو چمکا دیتے ہیں ۔

 
روز و شب را گردش پیہم ازوست
سیر او کن زانکہ ہر عالم ازوست

مطلب: دن اور رات کی مسلسل گردش اسی طرح ہے تو اس کی سیر کر کیونکہ ہر جہان اسی سے ہے ۔

 
مرغزارے با رصد گاہ بلند
دور بین او ثریا در کمند

مطلب: وہاں ایک سبزہ زار تھا جس میں اونچی رصدگاہ تھی ، جس کی دوربین ثریا کو کمند لیے ہوئے تھی ۔

 
خلوت نہ گنبد خضر است ایں
یا سواد خاکدان ماست ایں 

مطلب: میں سوچنے لگا کہ یہ جگہ نو سبز آسمانوں کی خلوت گاہ ہے یا پھر یہ ہماری زمین کا ماحول ہے ۔

 
گاہ جستم وسعت او را کراں
گاہ دیدم در فضاے آسماں

مطلب: کبھی تو میں اس کی وسعت کا کنارہ تلاش کرتا اور کبھی میں آسمان کی فضا کی طرف دیکھتا ۔

 
پیر روم آں مرشد اہل نظر
گفت مریخ است ایں عالم نگر

مطلب: پیر روم جو اہل نظر کے مرشد ہیں کہنے لگے کہ (حیران ہونے کی کوئی ضرورت نہیں ) یہ مریخ ہے اس کا عالم دیکھ ۔

 
چوں جہان ما طلسم رنگ و بوست
صاب شہر و دیار و کاخ و کوست

مطلب: یہ بھی ہماری دنیا ہی کی طرح رنگ و بو کا طلسم ہے اور اس میں بھی شہر، آبادی اور مکان و محل موجود ہیں ۔

 
ساکنانش چوں فرنگاں ذوفنوں
در علوم جان و تن از ما فزوں

مطلب: اس کے باشندے اہل یورپ کی طرح ذوفنون اور جسم و جان سے متعلق علوم میں ہم سے بڑھے ہوئے ہیں ۔

 
بر زمان و بر مکاں قاہر ترند
زانکہ در علم فضا ماہر ترند

مطلب: یہ لوگ زمان و مکان پر قوت و قدرت رکھنے والے ہیں ، اس لیے کہ وہ فضا کے علم میں ہم سے زیادہ ماہر ہیں ۔

 
بر وجودش آں چناں پیچیدہ اند
ہر خم و پیچ فضا را دیدہ اند

مطلب: یہ لوگ فضا کے وجود پر کچھ اس طرح لپٹے ہوئے ہیں کہ وہ اس کے ہر پیچ و خم سے باخبر ہو چکے ہیں ۔

 
خاکیاں را دل بہ بند آب و گل
اندریں عالم بدن در بند دل

مطلب: اہل زمین کا دل تو بدن کی زنجیر میں جکڑا ہوا ہے لیکن اس جہان میں بدن دل کے زیر اثر ہے ۔ (یہاں کے باشندوں کے بدن دل کی قید میں ہیں ) ۔

 
چوں دلے در آب و گل منزل کند
ہر چہ می خواہد بآب و گل کند

مطلب: جب کوئی دل بدن کو اپنی منزل بنا لیتا ہے تو وہ جو چاہتا ہے بدن کے ساتھ کرتا ہے ۔

 
مستی و ذوق و سرور از حکم جاں
جسم را غیب و حضور از حکم جاں

مطلب: مستی اور ذوق و سرور جان کے حکم سے ہے، جسم کے لیے غیب اور حضور بھی جان ہی کے حکم سے ہے ۔

 
در جہان ما دو تا آمد وجود
جان و تن آں بے نمود آں با نمود

مطلب: ہمارے جہان میں وجود کے دو حصے (ایک جان اور دوسرا تن ہے ۔ ) ایک نظر نہیں آتا اور دوسرا نظر آتا ہے ۔ روح نظر نہیں آتی جسم نظر آتا ہے ۔

 
خاکیاں را جان و تن مرغ و قفس
فکر مریخی یک اندیش است و بس

مطلب: اہل زمین خاکیوں کے لیے جان اور جسم کا تعلق پرندے اور پنجرے کی طرح ہے (پرندہ پنجرے میں قید ہو ) روح جسم میں قید ہے جب کہ اہل مریخ کی فکر صرف ایک ہے او ریک اندیشی ہے ۔

 
چوں کسے را می رسد روز فراق
چست تر می گردد از سوز فراق

مطلب: جب وہاں کسی کا روز فراق آ جاتا ہے تو وہ سوز فراق سے اور زیادہ چست ہو جاتا ہے ۔

 
یک دو روزے پیشتر از آن مرگ
می کند پیش کساں اعلان مرگ

مطلب: موت سے ایک دو روز پہلے ہی وہ دوسروں ، لوگوں کے سامنے موت کا اعلان کر دیتا ہے ۔

 
جان شاں پروردہ اندام نیست
لا جرم خو کردہ اندام نیست

مطلب: ان کی جان جسم کی پروردہ (پالی ہوئی) نہیں ہے اس لیے وہ بدن کی اتنی عادی نہیں ہے ۔

 
تن بخویش اندر کشیدن مردن است
از جہاں در خود رمیدن مردن است

مطلب: جسم کو اپنے اندر گھسیٹ لینا ہی ان کے نزدیک موت ہے ۔

 
برتر از فکر تو آمد ایں سخن
زاں کہ جان تست محکوم بدن

مطلب: اے زندہ رود یہ بات تیری فکر (سمجھ) سے کہیں بلند ہے ۔ کیونکہ تیری (اہل زمین کی) جان تو بدن کی محکوم ہے ۔

 
رخت ایں جا یک دو دم باید کشاد
ایں چنیں فرصت خدا کس را نداد

مطلب: یہاں دو ایک لمحوں کے لیے اپنا سامان سفر کھول لینا چاہیے یعنی ٹھہرنا چاہیے خدا تعالیٰ نے اس قسم کا موقع کسی اور کو نہیں دیا ۔